fbpx

کووڈ-١٩ کے تناظر میں وزارت خارجہ کی طرف سے نئی سفری ہدایات

08/07/2020 / /

برطانیہ، شنگن / یورپ کے بہت سے ممالک کے لیے سفر کھول دیا گیا ہے جہاں قومی سیرم انسٹیٹیوٹ سمجھتا ہے کہ انفیکشن کے امکانات بہت کم ہیں اور ڈنمارک کے شہری ان ممالک میں بغیر کسی نمایاں پابندیوں کے بغیر داخل ہوسکتے ہیں۔ برطانیہ، شنگن/یورپ کے وہ ممالک، جنھیں قومی سیرم انسٹیٹیوٹ نے انفیکشن کے پھیلاؤ کے تناظر میں “قرنطینہ ممالک” میں شامل کیا ہے، میں سفری ہدایات کو نارنگی رنگ دیا ہے (تمام غیر ضروری سفر سے اجتناب کیا جائے). سفری ہدایات یورپی یونین / شینگن اور برطانیہ کے ان ممالک کے لیے بھی نارنگی رہیں گی جہاں ڈينش مسافروں پر داخلے کی نمایاں پابندی لگائی گئی ہے.

یورپی یونین اور شینگن ممالک کے لئے وزارت خارجہ کے سفری رہنمائی کے بارے میں مزید یہاں پڑھیں۔

علاوہ ازیں وزارت خارجہ یورپی یونین / شینگن اور برطانیہ سے باہر کے انفرادی ممالک کے لیے سفری پابندیوں کو ختم کر رہا ہے جہاں یورپین یونین کا اندازہ ہے کہ وہاں انفیکشن کا خطرہ کم یا یورپ کے برابر ہے. یہاں بھی شرط یہ ہو گی کہ اس ملک میں ڈينش شہریوں کے لیے سفری سہولیات کی پابندی نہ ہو یا قرنطینہ کا تقاضا نہ کیا جائے اور یہ کہ اس ملک میں سلامتی کی عام صورتحال قابل قبول ہو.

یورپی یونین اور شینگن ممالک سے باہر ممالک کے لئے وزارت خارجہ کے سفری رہنمائی کے بارے میں مزید یہاں پڑھیں۔

وہ ممالک جہاں سفری رہنمائی کا رنگ زرد ہے، ان کے بارے میں وزارت خارجہ آپ کو اضافی طور پر محتاط ہونے کا مشورہ دیتی ہے، ملکی سفری رہنمائی سے باخبر رہیں، اور کووڈ-١٩ کے خاتمے تک وزارت خارجہ کی طرف سے مخصوص سفری ہدایات کی پیروی کریں.. مزید یہ کہ آپ کو مشورہ دیا جاتا ہے آپ رائیسا کلار (Rejseklar) اپپ ڈاؤن لوڈ کریں اور ڈينش لسٹ کے لیے رجسٹر ہوں. تاکہ آپ اس ملک کے بارے میں سفری رہنمائی میں تبدیلی کے متعلق معلومات حاصل کر سکیں جہاں آپ سفر کر رہے ہیں.

آپ انفرادی ممالک کے بارے میں تازہ ترین معلومات ڈینش سفارت خانوں کی ویب سائٹ پر حاصل کرسکتے ہیں۔ جہاں سفری پابندیوں اور انفیکشن کے پھیلاؤ کو کم کرنے کے لئے مقامی حکام کے ذریعہ لئے گئے دیگر اقدامات کے بارے میں معلومات حاصل کی جا سکتی ہیں۔

ڈنمارک کے تمام ممالک میں سفارت خانے نہیں ہیں۔ لہذا کچھ سفارت خانوں نے متعدد ممالک کا احاطہ کیا ہوا ہے۔ ملک کا نام درج کرکے آپ کو وہ سفارت خانہ یہاں مل سکتا ہے جس کی آپ کو تلاش ہے

Relaterede nyheder

ایپ اسمیٹ | اسٹاپ

10/07/2020
اسمیٹ | اسٹاپ ایک ایسی ایپ ہے جس کی مدد سے ہم سب کو ڈنمارک میں کووڈ- ١٩کے پھیلاؤ کو […] Læs mere… Læs mere…

ڈنمارک کو کھولنا اب تیسرے مرحلے میں داخل ہو گیا ہے

08/06/2020
پیر٨ جون ٢٠٢٠ سے ڈنمارک کے مزید حصے دوبارہ کھل جائیں گے۔ اس مرحلے میں مندرجہ ذیل شامل ہیں:  آرکیڈز […] Læs mere… Læs mere…

سرحدیں جزوی طور پر کھولی جا رہی ہیں مگر بین الاقوامی سفر کی کوئی تجویز ابھی تک زیر غور نہیں ہے

29/05/2020
جمعہ ٢٩ مئی ٢٠٢٠ کو وزیر اعظم کے دفتر میں پریس کانفرنس کے منٹ یہ تجویز ہے کہ ٣١ اگست […] Læs mere… Læs mere…

اب آپ کرونا ٹیسٹ کروا سکتے ہیں، خواہ آپ میں علامات نہ بھی ہوں

19/05/2020
اب کرونا وائرس کا ٹیسٹ کروانے کے لیے آپ کو اپنے مستقل ڈاکٹر سے حوالہ لینا ضروری نہیں ہے. ڈنمارک […] Læs mere… Læs mere…

حکومت ٹیسٹ اور انفکشن کا پتہ لگانے کے لئے نئی جارحانہ حکمت عملی پیش کرتی ہے

13/05/2020
وزیر اعظم کے دفتر میں١٢ مئی ٢٠٢٠ کی پریس کانفرنس کے منٹ ڈنمارک نے حال ہی میں کوویڈ-١٩ کے بڑے […] Læs mere… Læs mere…

ڈينش سیفٹی ایجنسی نے گھر پر بنے ماسک سے خبردار کیا ہے

12/05/2020
کچھ لوگوں نے ماسک کی سلائی یا بنائی شروع کر دی ہے. مگر سیفٹی ایجنسی نے متنبہ کیا ہے کہ […] Læs mere… Læs mere…

ڈنمارک کو دوبارہ کھولنے کا دوسرا مرحلہ اب شروع ہو رہا ہے

07/05/2020
وزیر اعظم میٹے فریڈرکسن کی ٧ مئی کو کی گئی پریس کانفرنس کے منٹ ڈنمارک کے لوگوں نے دوسروں سے […] Læs mere… Læs mere…

قومی محکمہ صحت نے “خطرہ گروپ” کی تعریف بدل دی ہے.

06/05/2020
کوویڈ-١٩ سے جڑے خطرہ گروپوں کے ایک وسیع تعارف کے بعد قومی محکمۂ صحت نے واضح کیا ہے کہ کون […] Læs mere… Læs mere…

اب منتخب شدہ خطرہ گروپ نمونوکوکل کے خلاف ٹیکے لگوا سکتے ہیں

04/05/2020
کوویڈ ١٩ انفیکشن کی وجہ سے سنگین بیماری کے سنگین خطرہ میں مبتلا افراد مفت نمونوکوکل ویکسینیشن حاصل کرنے کے […] Læs mere… Læs mere…

وزیر صحت اور صحت کے حکام کے ساتھ پریس کانفرنس کے منٹ – ٢٠ اپریل ٢٠٢٠

20/04/2020
ہم ڈنمارک کو دوبارہ کھولنے کے ابتدائی مراحل میں ہیں. یہ صرف اس وجہ سے ہے کہ ہم نے ڈنمارک […] Læs mere… Læs mere…

Støt minoriteten

Vær med til at skabe flere handlemuligheder for
minoritetsetniske danskere. Tak fordi du vil være med!



Hvert eneste medlemskab og donation styrker Mino Danmarks legitimitet og eksistensberettigelse.

Det gør en forskel og styrker foreningens muligheder for at lykkes med at skabe et lige samfund, uanset etnisk baggrund.

Hvert eneste medlemskab og donation styrker Mino Danmarks legitimitet og eksistensberettigelse.

Det gør en forskel og styrker foreningens muligheder for at lykkes med at skabe et lige samfund, uanset etnisk baggrund.