fbpx

کے بارے میں معلومات. حکومت کی طرف سے اردو زبان میں۔ covid-19

https://mino.dk/covid19/#regeringens-udmeldinger-om-covid-19

کے بارے میں معلومات. حکومت کی طرف سے اردو زبان میں۔ covid-19

14/03/2020 / /

اگر مجھے کھانسی ، بخار ہو یا میں صحیح سانس نہیں لے سکتا تو میں کیا کروں؟

  • آپ کو گھر جانا چاہئے اور گھر رہنا چاہئے یہاں تک کہ اگر آپ کے پاس ملازمت ہے تو آپ کو اپنا گھر چھوڑنا نہیں چاہئے۔
  • لوگوں کے قریب نہ کھڑے ہوں اور کسی کو اپنی گروسری کی خریداری میں مدد کرنے کو کہیں۔
  • اپنے گھر میں رہنے والے لوگوں سے فاصلہ رکھیں
  • مختلف کمروں میں رہیں۔
  • ایسے کمرے صاف کریں جو آپ کے گھر میں دوسرے لوگ استعمال کرتے ہیں۔
  • اگر آپ ایسا کرسکتے ہیں تو آپ خود ہی کمرے کو صاف کریں تاکہ آپ اپنے گھر کے دوسرے لوگوں کو متاثر نہ کریں
  • آپ عام صفائی سپرے استعمال کرسکتے ہیں۔ یاد رکھنا یہ ضروری ہے کہ ان جگہوں کی صفائی کرنا جو زیادہ کثرت سے استعمال ہوں۔ دروازے ، فرج یا سنک۔
  • کھڑکیوں کو کھولیں اور دس منٹ کے لئے دن میں دو بار تازہ ہوا حاصل کریں۔
  • اگر آپ کو علامات ہیں تو پھر آپ بچوں ، بیماروں اور بڑوں سے دور رہیں۔
  • بہتر ہے اگر آپ جلدی جلدی کرنے کے بجائے ایک اور دن گھر میں رہیں۔

ڈاکٹر سے کب رابطہ کرنا ضروری ہے؟

  • اگر آپ کے علامات خراب ہیں تو آپ کو ڈاکٹر یا ایمرجنسی ہاٹ لائن 1813 پر فون کرنا چاہئے۔ اگر آپ کو بخار ، سانس لینے میں دشواری یا تکلیف محسوس ہو تو آپ کو فون کرنا چاہئے۔
  • والدین کو ڈاکٹر کو فون کرنا چاہئے اگر ان کے بچے کو سانس لینے میں تکلیف ہو رہی ہے ، بخار ، اگر بچہ واقعی میں تھکا ہوا محسوس کررہا ہو۔ اگر بچہ معمول کے مطابق جواب نہیں دے رہا ہے اور اگر بچوں کے ہاتھ پاؤں ٹھنڈا ہو رہے ہیں
  • چھوٹے بچوں کے لئے والدین کو زیادہ محتاط رہنا چاہئے۔ سانس لینے کی قابلیت ، بھوک اور خشک لنگوٹ کی جانچ کریں
  • بچوں کا درجہ حرارت چیک کرنا یاد رکھیں۔

کیا میں کوویڈ 19 کے ٹیسٹ کروا سکتا ہوں؟

  • گلے کی جانچ کرکے ٹیسٹ لیا جاتا ہے
  • اگر آپ کو سنگین علامات نہیں ہیں تو آپ صرف گھر میں ہی رہ سکتے ہیں۔ اگر آپ ٹیسٹ کروائیں تو نتیجہ ایک ہی ہوگا۔
  • بیمار افراد اور بزرگوں کا تجربہ کیا جاسکتا ہے لیکن صرف اس صورت میں جب ان کا اپنے ڈاکٹر سے مشورہ دیا جائے۔
  • وہ افراد جو صحت اور بوڑھے لوگوں کے ساتھ کام کر رہے ہیں ان کی جانچ کی جاسکتی ہے اگر وہ سمجھتے ہیں کہ انہیں وائرس سے متاثر ہونے کا خطرہ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ لوگوں کو صحت مند رکھنے کے لئے ان لوگوں کو اپنی ملازمتوں کا خیال رکھنے کی ضرورت ہے۔

حکومت کا مشورہ جس میں تمام لوگوں کو محتاط رہنے کا طریقہ شامل ہے۔

  • اگر آپ صحتمند ہیں تو اپنی دیکھ بھال کریں اور دوسروں کی مدد کریں۔
  • ہاتھ دھونے اور سینیٹائزر کے استعمال سے متعلق مشورہ یاد رکھیں۔ قریبی رابطے اور سماجی اجتماعات سے اجتناب کریں۔
  • اگر آپ کو کھانسی ہو رہی ہے یا بخار ہے تو پھر صحت مند رہنے تک گھر میں ہی رہیں
  • اپنا فاصلہ برقرار رکھیں اور کسی کے قریب نہ جائیں جو آپ کے گھر میں نہیں رہتا ہے۔


حاملہ خواتین کو کورونا وائرس کا ٹیسٹ کرانا پڑتا ہے 

محکمہ صحت نے حاملہ خواتین کے بارے میں نئے اصول بتائے 

 مارچ کے بیان میں حاملہ خواتین ، ان کے بارے میں کچھ نئے قواعد موجود ہیں 19  

اب سے جب حاملہ خواتین آتی ہیں تو بچے کو جنم دیتے ہیں۔ اسے کورونا وائرس کا ٹیسٹ کرایا جائے گا۔ اگر اسے وائرس ہے تو پھر اسپتال زیادہ محتاط رہے گا اور انہیں ماسک پہننا پڑے گا۔ 

اگر مریض انفکشن ہونے کے آثار ظاہر کرتا ہے تو ان کا علاج کیا جائے گا جب تک کہ ان کو ٹیسٹ کا کوئی نتیجہ نہیں ملا۔ 

اس کا مطلب یہ ہے کہ جب بچہ پیدا ہوتا ہے تو متاثرہ ساتھی وہاں نہیں ہوسکتا۔ یہاں تک کہ اگر شراکت دار کے بیمار ہونے کا شبہ ہے تو انہیں آنے کی اجازت نہیں ہوگی 

اگر ساتھی متاثر ہے تو اسے کچھ دن تک نئے بچے کے ساتھ نہیں رہنا چاہئے۔ 

اگر ماں کو کورونا وائرس ہے تو وہ نئے بچے سے الگ نہیں ہوگی۔ یہ تب ہی ہوگا جب ماں کو علاج کی ضرورت ہو۔ اگر ماں کو کسی علاج کی ضرورت نہیں ہے۔ اسے اپنے نئے بچے سے الگ نہیں کیا جائے گا۔ 

اگر ماں وائرس سے متاثر ہے۔ لیکن اسے کسی علاج کی ضرورت نہیں ہے اسے جلد سے جلد گھر بھیج دیا جائے گا۔ 

ماں کو یہ مشورہ ملے گا کہ آپ بچے کی صحت کی جانچ کیسے کریں اور بچے کو دودھ کیسے کھلائیں۔ اس کی سفارش کی جاتی ہے کہ وہ ماسک پہنیں اور بچے کو کھلانے سے پہلے اپنے آپ کو دھو لے۔ 

اب بھی تمام اہم اسکین ہوں گے 

ہوسکتا ہے کہ بچے کو جنم دینے کے انتظامات منسوخ ہوجائیں۔ اور کچھ مشورے فون کے ذریعے ہوسکتے ہیں۔ لیکن سب سے اہم اسکین اب بھی وقت پر دستیاب ہوں گے۔ لیکن یہ اکیلے ہی ماں ہوگی جنھیں صلاح مشورے کرنے کی اجازت ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ زیادہ سے زیادہ وائرس نہ پھیلائیں۔ یہ یاد رکھنا بہت ضروری ہے کہ پیدائش کے بارے میں پریشان ہونے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔ 

ہسپتال ہر عورت کو جنم دینے کا اختیار فراہم کریں گے ، یہ معلومات نئے بچے کے آنے سے پہلے اور بعد میں ہیں۔ 


تمام لوگوں کے لئے مشورہ:

 سب کو مشورہ دے رہے ہیں کہ انفلمومیٹر جاکر چیک کریں Statens serum Institut

یہ ایک ایسی ویب سائٹ ہے جہاں آپ حکومت کو رجسٹر کرنے میں مدد کرسکتے ہیں کہ وائرس کیسے پھیل رہا ہے۔

انفلمومیٹر کے ذریعے لوگ ہر ہفتے رپورٹ کرتے ہیں اگر انہیں وائرس کی کوئی علامت محسوس ہوئی ہو۔ اس طرح ہم دیکھ سکتے ہیں کہ وائرس کیسے پھیل رہا ہے

ہر شخص انفلمومیٹر کا حصہ بن سکتا ہے۔ بچے ، بڑوں ، بزرگ ، صحتمند اور بیمار۔ آپ اپنا اور اپنے گھر میں رہنے والے لوگوں کی رجسٹریشن کرسکتے ہیں۔

یہاں تک کہ اگر آپ بیمار ہوئے ہوں تو آپ انفولیومیٹر کا حصہ بن سکتے ہیں۔ وہ لوگ جو بیمار نہیں ہوئے ہیں وہ بھی اس کا ایک حصہ بن سکتے ہیں۔ یہ صرف ضروری ہے کہ ہم سب داخل ہوکر اندراج کریں تاکہ ہم تمام معلومات میں مدد کرسکیں

 کا کام ڈنمارک میں بیماریوں کو دیکھنا اور روکنا ہے انفلومیٹر بنانے والے بھی ہیں۔ انہوں نے انفلمومیٹر بنایا تاکہ وہ اس بات پر نظر Afdeling for Infektionsepidemiologi, Statens Serum Institut

 رکھیں کہ کس طرح کورونا وائرس پھیل رہا ہے۔

www.influmeter.dk


وزیر اعظم نے یہ کہتے ہوئے پریس کانفرنس کا آغاز کیا کہ اب اسپتال میں 82 افراد داخل ہیں۔ ان میں سے 18 انتہائی نگہداشت یونٹ میں ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمیں بیماری کو روکنا ہے۔ لہذا وزیر اعظم نے کچھ نئے اصول دیئے۔ یہ اصول بدھ 18 مارچ 10 بجے شروع ہوگا

  1. اب سے ایک جگہ پر 10 افراد کو جمع کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ نہ گھر پر اور نہ ہی عوامی مقامات پر۔
  2. دکانوں کو بھی محتاط رہنا ہوگا۔ لوگوں کے درمیان فاصلہ رکھنا پڑتا ہے۔ اور ہاتھ دھونے کی سہولیات میسر ہوں۔ دکانوں کے اندر اور باہر
  3. ہمیں تمام کھیلوں ، حجاموں ، کلینکوں اور فٹنس مراکز کو بند کرنا ہوگا۔صرف صحت کے ساتھ کام کرنے والے افراد کو ہی کام کرنا چاہئے
  4. نائٹ کلب ، شیشبار ، پب اور کافی والے مقامات بند ہوجائیں گے۔
  5. تمام شاپنگ مالز بند کردیئے جائیں گے لیکن گروسری اسٹور ہی کھلے رہیں گے۔
  6. ریستوراں اور کافی کے مقامات بند کردیئے جائیں گے لیکن take-away اب تک دستیاب ہے۔
  7. تمام ڈنمارک افراد جو ڈنمارک پر لوٹتے ہیں۔ براہ کرم آپ کے پہنچنے کے بعد 14 دن تک گھر میں رہیں۔
  8. وزراء اور پولیس نے کہا کہ یہ بہت سنگین مسئلہ ہے اور ہم سب کو محتاط رہنا چاہئے۔ خاص طور پر نوجوانوں کو زیادہ محتاط رہنا چاہئے۔

وزیر اعظم نے یہ بھی کہا کہ اگر آپ کو کسی بھی شک کے ساتھ دوستوں کے ساتھ باہر جانا ہے تو آپ کو گھر ہی رہنا چاہئے۔

اور وزیر اعظم نے محتاط رہنے پر سب کا شکریہ ادا کیا اور ہیلتھ ورکرز کا خصوصی شکریہ ادا کیا۔

وزیر اعظم نے یہ بھی کہا کہ ایسے لوگوں کے لئے مدد آ رہی ہے جو کام اور پیسہ کھو رہے ہیں اور حکومت ان کی ہر ممکن مدد کرے گی۔ وہ اس پر تبادلہ خیال کریں گے کہ آج مدد کس طرح آئے گی۔

پولیس عوام کی مدد اور رہنمائی کے لئے زیادہ نظر آئے گی

محکمہ خارجہ نے کہا کہ کچھ لوگ دوسرے ممالک میں پھنس جائیں گے لیکن حکومت انہیں جلد سے جلد گھر لے آئے گی۔


ڈنمارک میں بھی کروناویرس آہ گی 

ہے. کائے ملکو نی آپنے قانون کو بدھلی کیا ہے۔ اگر آپ ڈنمارک میں رہتے ہو تو یہ کانون آپ کے لیئے زیادھا زروری ہے۔ 

بہت سے لوگوں نے انٹرنیٹ پر کورونا کے بارے میں بات کی ہے۔ ڈاکٹر اور پروفیسر بھی اس سے متفق نہیں ہیں 

اس بیان میں ہم ان سوالوں کے جوابات دیں گے جن کے جوابات تھامس بینفیلڈ نے دیئے ہیں۔ 

اگر آپ اپنے سوالات کے جوابات چاہتے ہیں تو آپ گورنمنٹ کو اس فون نمبر پر کال کرسکتے ہیں۔ 

اگر آپ ڈینش یا انگریزی نہیں بولتے ہیں۔ آپ کو مدد مانگنا چاہئے۔ 

Tlf. 70200233 

ان دنوں محفوظ رہنے کا طریقہ 

سوال: 

کیا مجھے کام سے گھر رہنا ہے؟ 

جواب: 

اگر آپ گھر میں رہ سکتے ہیں تو آپ کو گھر ہی رہنا چاہئے۔ براہ کرم حل تلاش کرنے میں اپنے سپروائزر کی مدد کریں 

سوال: 

گھر سے کب تک باہر رہ سکتا ہے 

جواب: 

آپ کو زیادہ سے زیادہ گھر میں رہنا چاہئے لیکن آپ پیدل چل سکتے ہیں۔ ریستوران یا کوفی والے مقامات پر نہ بیٹھیں۔ 

سوال: 

 کیا میں اپنے دوستوں کو اپنے گھر بلا سکتا ہوں؟ 

جواب: 

اگر آپ اپنے دوستوں کو اپنے گھر میں آپ سے ملنے کے لئے نہ کہیں تو یہ بہتر ہو گا۔ اگر وہ بیمار ہیں تو انہیں گھر ہی رہنا چاہئے۔ 

سوال: 

کیا مجھے اپنے بچوں کو اسکول سے گھر رکھنے کی ضرورت ہے 

جواب: 

جی ہاں. آپ کو اپنے بچوں کو گھر میں رکھنا چاہئے۔ بچوں میں انفیکشن کا زیادہ امکان ہوتا ہے لہذا انہیں دوسرے بچوں کے ساتھ نہ رہنے دیں۔ 

سوال: 

کیا میں اپنے بوڑھے والدین سے مل سکتا ہوں؟ 

جواب: 

ہ سب سے بہتر ہو گا اگر 

آپ ان کے ساتھ نہیں رہتے ہیں۔ اگر آپ دونوں صحتمند ہیں تو عوام میں ملیں۔ 

سوال:  

اگر میں بیمار ہوں لیکن میرے والدین کو میری مدد کی ضرورت ہے تو مجھے کیا کرنا چاہئے؟ 

جواب: 

پھر ان کے گروسری دروازے کے سامنے رکھیں اور ان سے کہو کہ جب وہ گروسری کو چھوئے تو اپنے ہاتھ دھونے کو کہتے ہیں 

سوال: 

کیا میرے بوڑھے والدین میرے بچوں کی دیکھ بھال کرسکتے ہیں؟ 

جواب: 

ہم تجویز کریں گے کہ آپ ایسا نہ کریں۔ بچوں اور بوڑھے لوگوں کے بیمار ہونے کا زیادہ امکان ہوتا ہے لہذا براہ کرم انہیں ہر ایک سے دور رکھیں 

سوال: 

کیا میں سپر مارکیٹ جا سکتا ہوں؟ 

جواب: 

ہاں تم کر سکتے ہو. لیکن سپر مارکیٹ میں کم لوگوں کی موجودگی میں جلدی اور جانا یاد رکھیں 

سوال:  

کیا میں اپنے دوستوں کے ساتھ کافی جگہوں پر جا سکتا ہوں اگر کام کرنا ہے 

جواب:  

یہ بہترین ہوگا۔ اگر آپ نہیں جاتے ہیں۔ کیونکہ آپ دوسرے لوگوں کے جراثیم سے بیمار ہوسکتے ہیں 

سوال: 

کیا میں باہر اپنے دوستوں سے مل سکتا ہوں؟ 

جواب: 

ہاں آپ باہر سے اپنے دوستوں سے مل سکتے ہیں لیکن اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ اپنا فاصلہ برقرار رکھیں تاکہ آپ ایک دوسرے کو متاثر نہ کریں 

سوال: 

کیا میں بس اور ٹرین کے ذریعے سفر کرسکتا ہوں؟ 

جواب: 

ہاں آپ بس اور ٹرین کے ذریعہ سفر کرسکتے ہیں لیکن ممکنہ حد تک کم کرنے کی کوشش کریں۔ صرف سفر کریں اگر آپ کو کرنا پڑے۔ 

وائرس سے متعلق حقائق: 

سوال: 

صاف کرنے والا صابن سے بہتر ہے یا میں صابن ہی استعمال کرسکتا ہوں 

جواب: 

اپنے ہاتھوں کو صابن سے دھوئے تو بہتر ہے 

سوال: 

کیا اپنی کہنی میں کھانسی کرنا بہتر ہے؟ 

جواب: 

ہاں کھانسی بہتر ہے کہنی میں یا کپڑے میں۔ اپنے ہاتھ استعمال نہ کریں کیونکہ جراثیم تیزی سے پھیل جائیں گے۔ 

سوال: 

کیا میرے بچے کو خطرہ ہے؟ 

جواب: 

سب کو خطرہ ہے لیکن بچے زیادہ خطرہ میں نہیں ہیں۔ یہ بوڑھے لوگ اور بیمار لوگ ہیں جو سب سے زیادہ خطرے میں ہیں 

سوال: 

کیا کوئی ایسی جگہ ہے جہاں میں چیک اپ کے لئے جاسکتا ہوں؟ 

جواب: 

نہیں ایسی کوئی جگہ نہیں ہے۔ ہم صرف ان لوگوں کا علاج کر رہے ہیں جو واقعی بیمار ہیں۔ 

سوال: 

مجھے یہ جاننے میں کتنا وقت لگے گا کہ میں بیمار ہوں 

جواب: 

کچھ لوگوں کو یہ بتانا مشکل ہے کہ انھیں اس بات کا احساس ہونے سے پہلے کہ وہ بیمار ہیں 10 سے 12 دن لگیں۔ لیکن آپ کو 10 دن کے بعد اس کے بارے میں جاننا چاہیئے۔ 

سوال: 

اگر میں کورونا وائرس میں مبتلا ہوجاتا ہوں تو میں کب تک بیمار رہوں گا 

جواب: 

کچھ لوگ 3 سے 7 دن تک بیمار رہتے ہیں اور کچھ لوگ اس سے زیادہ لمبے عرصے تک بیمار رہتے ہیں۔ اگر آپ بیمار ہیں تو آپ کو گھر ہی رہنا چاہئے  

سوال: 

اگر مجھے ٹیکہ لگایا جائے تو کیا یہ مدد کرتا ہے؟ 

جواب: 

ہم نہیں جانتے کہ آیا اس سے کوئی فرق پڑے گا لیکن ہمیں نہیں لگتا کہ اس سے کوئی فرق پڑے گا۔ 




پرعسس کہنفعرنس 13 مارچ7 بجع۔ وزیرعح ازم نع بتایا کع اب ڈنمارک مع802 لوگ کہرہنا سے بمار حے۔ 23 لوگ حسپتال مے حے اور2 حترے مے حین۔ ءس کے بااد معتتع فرعدعریکسعن نے ۳ زروری باتے کی۔

 1۔ جو لوگ زیادا بمار نحی حین ان کا الاج نحی حو گا۔

2۔ جو لوگ ڈخ سے باحر حین وہ جلدی سے واپس اجاے۔ جو لوگ ڈخ سے باحر جانے کے پلےن بنا رحے حین وہ اپنے پلےن کےنسل کرے

۳ کل سے14 مارچ ڈخ کے باڈر بند حو جاے گے۔ اس کا متلب حے کے جن کے پاس ویزہ نحی حین وہ لوگ اندر نحی اح سکتے۔ سرف وہ لوگ جین کے فےملی یا کام ڈخ مین حین ان کو اندر انے کی اجازت حو گی۔

سرکار نیہ یہ بھی باتے کے۔ یہ قانون سیرف لوگو کیہ ہے۔ سمان اوردوسری چیز ڈی کےمے اح سکتی حے۔اس لیے سمان کی ٹینشن لینے کی کوئی زرورت

Press konference 13 march 7 baje

Vazere azam ne bataya ke ab denmark mein 802 log corona se bimar hain. 23 hospital mein hain aur 2 log khatre mein hain. is keh baat Mette Frederiksen neh 3 zaroori batein ki

  1. jo ziyada bimaar nahin hain un ka elaaj nahi ho ga. Sirf jo log bohat bimaar hain un ko hospital med admit kya jaye ga.
  2. jo log DK se bahir hain wo jaldi se wapis ajaye. Jo log DK se bahir jaane ke plan bna rahe hai woh apne plan cancel kare
  3. kal se 14 march. Denmark ke boarder band ho jaye ge. Is ka matlab hai ke jin ka visa nahi hain woh log andar nahi ah sakte. Sirf vo log jin ki family ya kam DK mein hain woh log andar ah sakte hain.

government neh ye bhi bataya ke. Yeh qanoon sirf logo keh liye hain. samaan aur doosri cheeze DK mein andar ah sakti. Is liye samaan ki tension lene ki koi zaroorat nahi hain

Relaterede nyheder

Små forskelle i ledighed mellem minoritet og majoritet

30/06/2020
Der har igennem foråret været en del debat omkring hvordan minoritetsetniske danskere ville være mere udsatte, ift. at miste deres […] Læs mere… Læs mere…

Der skal handles mod racisme nu!

26/06/2020
En 28-årig dansk-tanzaniansk mand blev tirsdag morgen fundet dræbt ved et shelter i Nordskoven på Bornholm. I sigtelsen står der, […] Læs mere… Læs mere…

Ny forperson: Jeg har noget på hjerte.

03/06/2020
Kære du. Kære borger. Kære Mino-medlem, aktivist, interessent og partner.Jeg har noget på hjerte. Som privatperson, som brunt menneske. Egentlig […] Læs mere… Læs mere…

Mino Talk Live: “MAND DIG OP”

18/05/2020
Onsdag d. 20. maj kl. 20.00 går Mino Talks Live med Bashar Al-Saoudi, hvor vi inviterer til en samtale om […] Læs mere… Læs mere…

De varme hænder: Hver fjerde “varme hånd” i Regíon Hovedstaden er ikke-vestlig indvandrer eller efterkommer.

14/05/2020
Mino Danmark I en ny rapport fra Statens Serum Institut med fokus på etnicitet og alder blandt COVID-19 smittede i […] Læs mere… Læs mere…

Ny rapport med fokus på etnicitet og alder blandt COVID-19 smittede i Danmark

08/05/2020
Statens Serum Institut sætter i denne uges ”trend-og-fokus-rapport” spot på etnicitet og aldersgruppering. Rapporten konkluderer, at indvandrere og efterkommere fra […] Læs mere… Læs mere…

Mino Danmark modtager ny donation fra Roskilde Festival

16/04/2020
Mino Danmark modtager 600.000 kroner fra Roskilde Festival til at skabe større mangfoldighed i dansk kulturliv og opbygge nye platforme, […] Læs mere… Læs mere…

Mino Danmark søger kommunikationspraktikant

07/04/2020
Vil du være med til at sætte dit præg på kommunikation og medlemshvervning i en interesseorganisation, der arbejder for at […] Læs mere… Læs mere…

Mino Danmark søger praktikant til kultur- og eventafdeling

07/04/2020
Vil du være med til at sætte dit præg på udvikling af events og kulturarrangementer i en interesseorganisation, der arbejder […] Læs mere… Læs mere…

Ny stilling: Økonomiansvarlig

03/04/2020
Har du solid regnskabserfaring, gerne fra en civilsamfundsorganisation, og et ønske om det fulde ansvar for alle opgaverne i en […] Læs mere… Læs mere…

Støt minoriteten

Vær med til at skabe flere handlemuligheder for
minoritetsetniske danskere. Tak fordi du vil være med!



Hvert eneste medlemskab og donation styrker Mino Danmarks legitimitet og eksistensberettigelse.

Det gør en forskel og styrker foreningens muligheder for at lykkes med at skabe et lige samfund, uanset etnisk baggrund.

Hvert eneste medlemskab og donation styrker Mino Danmarks legitimitet og eksistensberettigelse.

Det gør en forskel og styrker foreningens muligheder for at lykkes med at skabe et lige samfund, uanset etnisk baggrund.